Friday, June 17, 2016

Mann Mayal Episode 10 Review

Mann Mayal Episode 10 Review

Mann Mayal Episode 10 Review

There were nearly 3 scenarios shown in this week’s episode of Mann Mayal. First was about Mikail and his spoiled behavior. Secondly it was Salahuddin and Rehman Sahab. And then there was Manahil in her parents’ house. However each of these scenarios are interlinked with each other in one way or the other. The 3 main characters of the story Manahil, Salahuddin and Mikail are being shown living in their respective realms. And how they are fighting with situations.

The second scene of the episode opened the hidden truth for the first time on Mikail's parents that he wastes his family money in gamble. Shahab and Raheela are now aware of the fact that their son is a habitual gambler. And they are quiet upset about it. But their hands are tied as they can’t do anything than to just stop him from doing this or else he can make any kind of emotional decision. Since Mikail has been caught up in the middle and also has lost the money this guy has become now more violent. “Mei kio sudhru? Meri koi ghalati hi nahi”.

On the other side the unknown bond between Salahuddin and Rehman Sahab is getting stronger day after day since he takes care of him more than anyone else in the world at this moment. The conversation between the two in the midst of the episode was quiet meaningful and touchy. Salahuddin has at the very moment no one to talk to except for Rehman Sahab and same goes with this elderly man. Both share their thoughts and feelings with each other when there is no one around, and so to let go the burden off of their heavy chests. They have nearly developed a father son like relationship with each other in these days which is heart touching. The seasoned actor Talat Hussain has therefore ornamented his character with his polished acting skills which have no match.

At the same time Manahil is staying at her parents' house for a while as she has come to visit them.  But they, especially her mother has sensed that something is not right with Manahil. Manahil is hiding the truth from her parents and family proving to be a good daughter. Whereas Salahuddin remains being protective and concerned about Mannu. He tells his sister Bia to be with her most of the time as long as she is there. One, for the reason, because he cares about her. And second since it would be a way to stay updated from Mannu’s situations.

While analyzing Manahil’s situation I wondered about the life of a girl who’s life is divided in 2 worlds. One is where she stays happy and where she originally belongs to. While the other is the one where she pretends to be someone she is entirely not. This girl (Mannu) is tormenting herself by bearing the consequences of her marriage with a man who cares less about her and more about his other activities. Now that Mannu’s father has declared that she would not go back, let’s see what is going to happen next in the episode.

Seeing the ending this week 2 of the questions popped in my mind at a snap of fingers. One, will Salahuddin and Mannu see each other ever again in life. And the other one is that, will Mannu and Mikail get divorced. Can’t wait to see the next episode.

Keep watching Mann Mayal every Monday at 8 pm.

Mann Mayal Episode 8 Review

Mann Mayal Episode 8 Review

Mann Mayal Humtv

Mikail wants Manahil to lead a double life from now on. He wants her to be what his parents like her to be. And also become what he wants her to be like. Now Manahil is in some kind of utter confusion and its time that she has to decide how she will handle this dual situation in her own way.

On the other hand things got quiet intensed and complicated at Salahuddin's side as well. While he is struggling for his survival in a big city like Karachi, he finds this old helpless and ignorant man who happens to be his friend Ifftikhar's father. As in my last review I had explained his entire condition. It remained the same and even worse in this episode. Jameel the servant with his Maalkin (Kuki) are always on the verge of illtreating Rehman Sahab in one way or the other.

At some point last night's episode was quiet disturbing as well. Especially the scenes where Rehman sahab was being scolded on by both Jameel and Kuki while Salahuddin tries to help this old man out in his worse times made us all realise how important our elderly people are in our families, because it is just them who have struggled for us their whole lives to make us stand where we are today. Salahuddin has a soft corner for Rehman Sahab and the sweetest thing that he did for him was refreshing this old man's passion for reading, by reading to him his favorite manuscripts.

Well, well, well both Manahil and Salahuddin are striving to survive the big alterations in their lives respectively that have brought a 360 degrees change in their lives. Where Mannu is striving to win her husband’s and in-laws’ hearts at the same time Salahuddin is making efforts to settle down in life whereas his first step in this regard has turned out to be so unpleasant and scruffy.

The story is going to move on forward and bring on some new characters to the scenario that will add up to the beauty of it more engaging the people to stick to the serial throughout till the end.

Udaari Ninth Episode Review

اُڈاری کی نویں قسط: خلاصہ اور تبصرہ

Udaari Hum TV

اُڈاری کی نویں قسط کا آغاز میراں کے شیداں کو سمجھانے سے ہوتا ہے ۔ شیداں اس کی بات مان لیتی ہے اور اس دن میوزک روم نہیں جاتی۔ میراں میوزک روم پہنچتی ہے جہاں وہ عرش، ملی اور حارث کی آپس کی گفتگو غور سے سنتی ہے۔ زبان اورتلفظ کی غلطیوں پر عرش کا رویہ میراں کے ساتھ کافی تحقیر آمیز ہوتا ہےلیکن ملی صورتحال کو سنبھالتی ہے۔ دوسری جانب شیداں اپنی فطرتی مددگار طبیعت کا مظاہرہ کرتی ہے اور ملی کے گھر کے باغ میں سبزیاں لگانے میں ان کے مالی کی مدد کرتی ہے۔پھر کچن میں چائے پیتے ہوئے وہ ٹی بیگ والی چائے کو "تعویز " والی چائے کہتی ہے تو مزا دوبالا ہو جاتا ہے۔ میوزک روم میں جاری زبان و تلفظ کی کشمکش موسیقی کے سر تال کو پکڑنے کی جدو جہد میں تبدیل ہو چکی ہے۔ لیکن میراں کافی کوشش کے باوجود اس میں بھی ناکام رہتی ہے، جس پر عرش کا پارہ آسمان کو چھونے لگتا ہےاور وہ کمرا چھوڑ کر چلا جاتا ہے۔
گاؤں میں تیز جھڑی لگی ہے اور معصوم زیبو گھر میں کھیل رہی ہوتی ہے کہ امتیازوہاں آکر اسے اپنی بربریت کا نشانہ بناتا ہے، معصوم زیبواس صدمے، دکھ، اور تکلیف کے باعث شدید بیمار پڑ جاتی ہے۔ اس کی ماں اس کی تیمارداری کرتی ہے تو امتیاز جو اپنے ظلم کے باعث خوفزدہ ہوتا ہے ساجدہ کے ساتھ اچھا سلوک کرتا ہے تاکہ اسے کسی قسم کا شبہ نا ہو۔ جب ساجدہ اسے پرانے رویے ، غصے، بدتمیزیوں اور ظلم کی شکایت کرتی ہے تو وہ اسے میٹھی میٹھی باتیں کرکے پھسلا لیتا ہے۔

گاؤں میں شیداں کے گھر میں جازا بارش اور طوفان سے ڈر کر اٹھ جاتا ہے جب اس کا ماموں اسے تسلی دیتا ہے تو وہ کہتا ہے کہ ایسی ہی رات میں ابا کا انتقال ہوا تھا تو وہ اس کے ذہنی خؤف کی طرف اشارہ کرتا ہے جو وہ شیداں اور میراں کی دوری کے باعث محسوس کرتا ہے، جو ملی کے موبائل فون پر شیداں اور میراں سے بات کرنے کے بعد کافی بہتر ہو جاتا ہے۔ ملی، میراں کو سمجھاتی ہے کہ عرش غصے کا بہت تیز ہے مگر دل کا بہت اچھا ہے، پھر وہ اس سے اپنی دوستی اور تعلق مزید گہرا کرتی ہے اور اسے اپنا موبائل فون تحفے میں دے دیتی ہے تاکہ وہ اپنے گھر والوں سے رابطہ کر سکے۔ کھانے کے وقت میراں اپنی والدہ شیداں سے اپنے خوف اور خدشات کا اظہار کرتی ہے کہ وہ شائد ان لوگوں کی طرح نہیں گا سکے گی، جس پر شیداں اسے سمجھاتی ہے کہ وہ اپنا دھیان موسیقی سیکھنے پر رکھے اور اپنی صلاحیتوں پر مکمل بھروسہ رکھے۔ اس بات سے میراں کا حوصلہ تھوڑا بہتر ہوتا ہے اوروہ اپنی ماں کو بہت سے نئی چیزوں کے بارے میں بتاتی ہے جس میں اے سی، ٹب، اور ٹی وی شامل ہوتا ہے۔ اس پر شیداں اس کو شاباش دیتی ہے کہ وہ کیسے ایک ہی دن میں کئی چیزیں سیکھ گئی ہے۔ اپنی ماں کے اس حوصلہ افزاء رویے اور تحسین پر میراں بہت خوش ہوتی ہے۔

میوزک روم میں عرش معمولی غلطی پر آپے سے باہر ہوجاتا ہے اور چیزوں کو لات مار کر گرا دیتا ہے۔ میراں سے شدید بدتمیزی کرتا ہے جس پر میراں کمرہ چھوڑ کر چلی جاتی ہے۔ ملی اور حارث ، عرش کی بدتمیزی پر اسے ٹھیک ٹھاک سناتے ہیں اور کہتے ہیں کہ وہ میراں سے ایسا سلوک اس لیے کر رہا ہے کیونکہ وہ ایک غریب اور پسماندہ طبقے کی لڑکی ہے، اگر اس کی جگہ کوئی اور لڑکی ہوتی اور بھلے کتنی بڑی غلطی کیوں نا کرتی ، عرش کبھی بھی اس سے ایسا سلوک نہیں کرتا۔ عرش اس بات کو نہیں مانتا، مگر حارث اور ملی اسے میراں سے معافی مانگنے کا کہتے ہیں۔ عرش اس بات پر غصے میں کمرے سے باہر نکلتا ہے اور میراں کے کمرے کی طرف جاتا ہے۔ وہ سوچتا ہے کہ وہ میراں کو یہ بتائے گا کہ وہ غلط گانے پر ناراض ہو اتھا نا کہ اس کے غریب اور پسماندہ پسِ منظر پر، مگر میراں اسے سوئمنگ پول کے کنارے روتی دکھائی دیتی ہے تو اس کا دل پسیج جاتا ہے۔ وہ اس کے پاس جا کر بیٹھتا ہے اور اس سے بات چیت شروع کرتا ہے جس پر میراں اسے کہتی ہے کہ اسے گانا نہیں آتا اور کبھی اس کی سہیلی فروا کی طرح نہیں گا سکتی، جس پر عرش اسے سمجھاتا ہے کہ وہ گاؤں کی اس میراں سے بہت متاثر ہوا تھا جس نے نہایت اعتماد سے اسے پنجابی میں کھری کھری سنائیں تھیں۔ وہ میراں سے معافی طلب کرتا ہےا ور اس سے رکنے کی درخواست کرتا ہے جس پر میراں مان جاتی ہے اور یوں قسط کا اختتام ہوتا ہے۔

اس قسط کے سب سے اہم مناظر وہ ہیں جہاں معصوم زیبو شدید صدمے اور دکھ کا شکار ہے اور اپنے سوتیلے والد سے بے انتہا خوفزدہ ہے۔ ان مناظر کی سنگینی سے تمام والدین سیکھ سکتے ہیں کہ اگر ان کے بچے خوفزدہ ہوں ، پریشان ہوں، کوئی بات بتانا چاہ رہے ہوں تو وہ انہیں ان علامات پر غور کرنا چاہیئے اور انہیں کبھی بھی نظر انداز نہیں کرنا چاہیئے۔ معصوم زیبو کی شاندار ادکاری نے جہاں بہت سے لوگوں کے دلوں کو موہ لیا ہے وہیں انہیں اپنی اولاد کے تحفظ کے بارے میں بہت بہترین معلومات و تربیت بھی فراہم کی ہے۔ اس کے لیے اُڈاری کی پوری ٹیم شاباش کی حقدار ہے۔

Deewana Episode 4 Review

Yes its more than we expected! Falak and family have added up like "strawberry syrup" on the ice cream J Perfect attire, attitude and dialogues. Shehroz has given the right spice to his character. Iqra has also popped out of the "Ronni soorat"… Aah I wondered what if she keeps on yelling and crying after she recovers from unconsciousness. Thanks to the writer who actually understood that viewers are bored of "Udasi Begum type" characters. Iqra is more perfect for "Bholi si soorat ankho mein masti and yes door khari sharmaey" (aey haey ) which she actually did in some scenes. Perfect background music is also complementing the scenes. In the scenes when Falak is having a dialogue with his mother, for the witty cum sweet expressions of Falak I think the song "ye larka toh deewana! hy deewana" would be perfect 

"DEEWANA" is like a buy 1 get 2 free offer. Its more than a drama and just perfect filmy. Some scenes have been shot so beautiful that the small TV screens seems to be injustice with the directing, acting & writing skills. If I say its a FILM SERIES it won't be wrong as the entertainment is equal to watching a Film.

Shama is leading the drama and silent acting of Qureshi sahab is tremendous. "Shabnam n Shola" oops I mean Shabnam in shola, bharkeela and fasadi attitude looks too good and Karwii (bitter). I suggest the writer should add up a "Takia kalam" for Shabnam "Q k joot toh mein bolti nahi" or "mein toh krti hu sachi baat chahey kisi ko aag lgy". This would have gone too good when she 1st meets Shama and inquires about Mehru. Junaid seems to be a promising actor. He is working well. I'm sure "DEEWANA" will prove to be an "Anti-virus" for all infected dramas on air and disinfect the pens of the writers and directors brains.

Udaari 10th Episode Review

اُڈاری دسویں قسط: خلاصہ اورتجزیہ

udaari hum tv

دسویں قسط کا آغاز ایک نہایت ہی معلوماتی منظر سے ہوتا ہے جس میں بچوں پر جنسی تشدد کے بارے میں ایک کانفرنس دکھائی گئی ہے، ملی کی والدہ جو کشف فاؤنڈیشن کی ایک سرگرم کارکن ہیں ،اپنے خطاب میں بچوں پر جنسی تشدد کے بارے میں نہایت ہی مفید اور کارآمد معلومات فراہم کرتی ہیں جو والدین کے لیے جاننا اور سمجھنا نہایت ہی ضروری اور اہم ہے۔ اس منظر میں لیلی زبیری نے اپنی سادہ مگر پر اثر تقریر سے جہاں ہمارے معاشرے میں موجود ایک ناسور کی نشاندہی کی، وہیں انہوں نے بہت سے دلوں کو جیت لیا۔ اگلا منظر ایک نہایت ہی خوش کن منظر ہے جس میں عرش ، میراں کو منا کر واپس لاتا ہے اور اپنے دوستوں ، حارث اور ملی کا دل جیت لیتا ہے۔دوسری جانب ساجدہ جو زیبو کی بیماری اور عجیب و غریب رویے سے سخت پریشان ہے ، اسے امتیاز جھوٹی تسلیا ں دیتا ہے اور جھوٹا پیار جتاتا ہے، معصوم زیبو جو نہایت شدید صدمے ، تکلیف ، دکھ اور خوف کا شکار ہے، اپنی ماں سے ایک لمحے کے لیے بھی جدا ہونے پر تیار نہیں ہوتی۔

میوزک روم میں عرش اور میراں گانے کی تیاری کرتے ہیں جہاں عرش نہایت دوستانہ انداز میں اسے کچھ سمجھاتا ہے اور میراں بہت آرام سے اس کی ہدایت پر عمل کرتی ہے، جس پر عرش حیران ہو کر پوچھتا ہے کہ وہ پہلے اس کی بات کیوں نہیں سمجھ رہی تھی، جس پر میراں اسے بتاتی ہے کہ وہ پہلے اس کے سخت اور درشت رویے سے خوفزدہ تھی۔ ملی کھانے کے لیے برگر لے کر آتی ہے تو میراں عرش کو دیکھتی ہے کہ وہ کیسے کھا رہا ہے پھر اس کے انداز میں برگر کھاتی ہے، عرش اسے کھاتے دیکھتا ہے اور منہ صاف کرنے کے لیے ٹشو پیپر دیتا ہے، یہ ایک نہایت ہی پیارا منظر ہے۔

زیبو کا بخار نہیں اترتا جس پر امتیاز اسے موٹر سائیکل پر اکیلے ڈاکٹر کے پاس لے جانے کی کوشش کرتا ہے، جس پر زیبو شدید خوف کا ردِ عمل دیتی ہے اور کہتی ہے کہ "مجھے ابّا کے ساتھ نہیں جانا، ابّا اچھا نہیں ہے، ابّا گندا ہے ۔" جس پر امتیاز گھبرا جاتا ہے اور پھر نہایت چالاکی سے کہتا ہے کہ یہ میرے ڈانٹنے پر ناراض ہے۔یہ ایک نہایت اہم معلوماتی منظر ہے جس میں جنسی تشدد کے شکار بچوں کا ردِعمل دکھایا گیا ہے کہ وہ کیسے ان لوگوں سے خوفزدہ ہوتے ہیں جو ان کے جنسی استحصال کا باعث ہوتے ہیں اور ایسے لوگوں کے ساتھ کسی بھی قسم کے میل جول کو پسند نہیں کرتے اور اس کے خلاف اپنے رویوں اور باتوں سے اظہار کرتے ہیں ۔ والدین کو ایسے اشاروں اور باتوں پر غور کرنا چاہیئے اور انہیں بچوں کی معمول کی باتیں سمجھ کر نظر انداز نہیں کرنا چاہیئے۔ میوزک روم میں ایک انقلاب ہمارا منتظر ہے ، جہاں حارث اور ملی کےجانے کے بعد عرش اور میراں گانے کی نہایت ہی دوستانہ انداز میں مشق کرتے نظر آتے ہیں۔ میراں ان لوگوں کے صبح دیر سے اٹھنے کی شکایت کرتی ہے اور کہتی ہے کہ وہ صبح جلدی اٹھ کر گانے کی مشق کرنا چاہتی ہے جس پر عرش پوچھتا ہے کہ وہ کتنے بجے آنا چاہتی ہے تو میراں کہتی ہے ساڑھے چھ بجے صبح، جس کو سن کر عرش ایک لمحے کو چکرا جاتا ہے کیوں کہ ایک شہری لڑکے کے لیے اتنی صبح اٹھنا ناممکن سی بات ہے۔ پھر عرش اس شرط پر تیار ہوتا ہے کہ صبح میراں اسے فون کر کے اٹھائے اور مسلسل کال کرے کیونکہ وہ ایک کال پر کبھی نہیں اٹھے گا۔ اگلی صبح جب میراں اسے اٹھانے کی کوشش کرتی ہے تو عرش اس سے پانچ منٹ مزید سونے کا کہتا ہے اور پھر ایک گھنٹے کے لیے سو جاتا ہے۔ جب وہ میوزک روم پہنچتا ہے تو وہاں میراں اکیلی گار ہی ہوتی ہے، وہ نہایت اعتماد سے گانے میں کچھ تبدیلیاں کر کے گا رہی ہوتی ہے جسے عرش سن کر بہت اس کی بہت حوصلہ افزائی کرتا ہے۔ میراں اسے بتاتی ہے کہ وہ صبح چار بجے سے گانے کی مشق کر رہی ہے اور وہ آٹھ بجے آیا ہے۔ پھر وہ تمام لوگ مل کر گانے کی مشق کرتے ہیں اور ایک نہایت ہی شاندار دھن تخلیق کرتے ہیں۔

اگلے منظر میں امتیاز کا گھناؤنا روپ پھر سے ہمارے سامنے آتا ہے جس میں وہ معصوم زیبو کو دھمکاتا اور ڈراتا نظر آتا ہے وہ زیبو کو دھمکی دیتا ہے کہ وہ اس کی ماں کو جلا کر مار دے گا اور پھر اسے بھی قتل کر دے گا۔ جس پر زیبو شدید خوفزدہ ہو جاتی ہے۔ دوسری جانب وہ ساجدہ کو زیبو کے لیے اپنی فکر اور پریشانی دکھانے کی کوشش کرتا ہے اور زیبو کے لیے مختلف مزاروں پر منتیں مانگنے کا ڈرامہ رچاتا ہے، جس پر ساجدہ اس کے لیے اور صدقے واری ہوتی ہے۔ دوسری جانب وہ زیبو پر غصہ، جعلی پیار، اور دیگر رویوں کے ذریعے اسے شدید شدید ذہنی ، جسمانی ، اور جنسی طور پر ہراساں کرتا دکھایا جاتا ہے۔ یہ نہایت ہی دردناک صورتحال ہے جس میں عریشہ (زیبو) کی اداکاری کی داد دینی پڑے گی۔ اتنی چھوٹی بچی نے ڈرنے، خوفزدہ اور ذہنی پریشانی کی جتنی درست طریقے سے ادکاری کی ہے وہ شائد ایک بڑی عمر کی اداکارہ کے لیے بھی مشکل ہوتا، لیکن زیبو نے اسے نہایت معصومیت اور سادگی سے ادا کیا، جس کے لیے وہ بے تحاشا داد و تحسین کی مستحق ہے۔ احسن خان کے کردار سے آپ چاہے جتنی بھی نفرت کریں، لیکن جس طرح احسن خان نے اپنے ہیرو والے ناز و انداز کو خطرے میں ڈا ل کر اس کردار کو ادا کیا ہے اس سے ان کی فنِ اداکاری کے ساتھ بے لوث اور بے خوف محبت صاف دکھائی دیتی ہے۔

شیداں اپنے مختصر مناظر کے ساتھ اپنی ہمدردانہ طبیعت اور دوستانہ رویوں کا مظاہرہ کرتی دکھائی دیتی ہے، ایک جانب وہ گھریلو ملازمین کی مدد کرتی دکھائی دیتی ہے تو دوسری جانب وہ گھر کی مالکن کے پیر مڑجانے کی صورت میں تکلیف کا علاج اپنے دیسی ٹوٹکوں سے کرتی دکھائی دیتی ہے۔ جس سے ڈرامے کی گھمبیر تا میں کچھ کمی آتی ہے۔ دوسری جانب میراں پہلی بار جاپانی کھانا کھاتی ہے اور اعلان کرتی ہے کہ "یہ تو جی کچی مچھلی ہے، میں نہیں کھاتی۔" جس پر عرش اس کا مذاق اڑاتا ہے تو وہ عرش کو جوابی حملے سے چپ کروا دیتی ہے، جس سے پتا چلتا ہے کہ وہ آہستہ آہستہ ان لوگوں میں گھل مل رہی ہے۔ ڈرامے کا آخری منظر نہایت ہی خوفناک ہے جس میں امتیاز ایک مرغی کو زیبو کے سامنے ذبح کرنے کےلیے لے آتا ہے اور اپنے ذومعنی جملوں سے اسے مزید ذہنی اذیت دیتا ہے۔

یہ قسط ، ڈرامے کے مقاصد کے لحاظ سے اب تک کی سب سے بہترین قسط تھی، اس قسط میں جہاں بچوں پر جنسی تشدد کے بارے میں ناضرین کو آگاہی نہایت مہارت اور کمالِ فن سے دی گئی ہے، وہیں ایک باحوصلہ اور ہنر مند عورت کو اعتماد سے ترقی کی سیڑھیاں چڑھتے ہوئے دکھایا گیا ہے، بے شک ایک بااعتماد اور با حوصلہ عورت کوئی بھی رکاوٹ عبور کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے، بس اسے تھوڑے پیار، حوصلہ افزائی، دوستی، اور خود پر یقین کرنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ امید ہے ناضرین کو یہ قسط بہت پسند آئی ہوگی۔